قومی خبریں

title_image


Share on Facebook

نئی دہلی۔ سپریم کورٹ نے گؤ رکشا کے نام پر تشدد کے واقعات پر لگام لگانے سے متعلق عرضیوں پر سماعت کے بعد آج فیصلہ محفوظ رکھ لیا۔ چیف جسٹس دیپک مشرا ، جسٹس اے ایم کھانولکر اور جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ کی بنچ نے تحسین پونا والا اور تشار گاندھی کی عرضیوں پر تمام متعلقہ فریقین کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ محفوظ رکھاط اس سے قبل سماعت کے دوران عدالت نے کہا کہ گؤ رکشا کے نام پر تشدد کے واقعات نہیں ہونے چاہئیں ۔ بھلے ہی قانون ہو یا نہ ہو ، کوئی بھی گروپ قانون کو اپنے ہاتھ میں نہیں لے سکتا۔

جسٹس مشرا نے کہا کہ ریاستی حکومتوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس طرح کی واردات اپنے یہاں نہ ہونے دیں۔ گؤ رکشکوں کے ذریعہ تشدد کے واقعات کو روکنے کے لئے عدالت تفصیلی ہدایت جاری کرے گی۔ سماعت کے دوران عرضی گذاروں میں سے ایک کی طرف سے پیش سینئر وکیل اندرا جے سنگھ نے بنچ کو بتایا کہ اب تو سماج دشمن عناصر کا حوصلہ بڑھ گیا ہے۔ وہ گائے سے آگے بڑھ کر بچہ چوری کا الزام لگا کر خود ہی قانون ہاتھ میں لے کر لوگوں کو مار رہے ہیں۔ مہاراشٹر میں ایسے واقعات ہوئے ہیں۔

وکیل سنجے ہیگڑے نے ان واقعات سے نمٹنے او ر واردات ہونے کے بعد اپنائے جانے والے اقدامات پر عدالت کے سامنے مفصل تجویز پیش کی جو انسانوں کے حفاظت کے لئے قانون(ماسکوکا ) پر مبنی ہے۔