قومی خبریں

title_image


Share on Facebook

نئی دہلی: معروف سماجی کارکن اناہزار نے مودی حکومت پر سوامی ناتھن کمیشن کی سفارشات نافذ کرنے، لوک پال اور لوک آیکتوں کی تقرری نیز دیگر وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام رہنے کا الزام لگاتے ہوئے وارننگ دی ہے کہ اگر ان یقین دہانیوں کو پورا نہیں کیا گیا تو وہ دواکتوبر سے رالیگن سدھی میں پھر سے تحریک شروع کردیں گے۔

انا نے وزیراعظم کے دفتر میں وزیرمملکت ڈاکٹر جتیندر سنگھ کو جمعرات کو خط لکھ کر تحریک کے تعلق سے آگاہ کیا ہے۔ اس خط کی کاپی وزیراعظم مودی ، زراعت کے وزیرمملکت گیجندر سنگھ شیخاوت اور مہاراشٹر کے وزیراعلی دیویندر فدنویس کو بھی بھیجی گئی ہے۔

انہوں نے لکھا ہے کہ ان مطالبات پر وہ گزشتہ 23مارچ سے دہلی کے رام لیلا میدان پر بھوک ہڑتال پر بیٹھے تھے اور تب سات دن بعد مرکزی حکومت نے انکے مطالبات کو ماننے کا یقین دلاکر ان کی بھوک ہڑتال ختم کرائی تھی۔ اس یقین دہانی خط پر ڈاکٹر سنگھ نے ہی دستخط کئے تھے۔ اس کے بعد سے ان مطالبات کو پورا کرنے کی سمت میں کسی طرح کا قدم نہیں اٹھایا گیا ہے۔

انا ہزار نے لکھا ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی نے لوک سبھا انتخابات کی تشہیر کے دوران کسانوں کے لئے سوامی ناتھن کمیشن کی سفارشات کو نافذ کرنے ، کسانوں کو فصل لاگت کی ڈیڑھ گنا قیمت دینے، لوک پال ، لوک آیکتوں کی تقرری اور ملک میں وسیع کولڈ اسٹوریج بنانے کا وعدہ کیا تھا۔

انہوں نے کہاکہ حکومت بننے کے بعد بھی و زیراعظم نے ان وعدوں کو پورا کرنے کا یقین دلایا تھا۔ انا نے کہاکہ انہوں نے وزیراعظم کو کئی مرتبہ خط لکھ کر ان وعدوں کی یاد دلائی ہے لیکن ان کی طر ف سے صرف اتنا جواب ملتا ہے کہ آپ کا خط ملا۔

انہوں نے کہاکہ وہ مودی حکومت کو اس خط کے ذریعہ ایک بار پھر ان یقین دہانیوں اور وعدوں کی یاد دلا رہے ہیں اور اگر انہیں پورا نہیں کیا جاتا ہے تو وہ آئندہ 2 اکتوبر سے ایک بار پھر رالیگن سدھی میں تحریک شروع کریں گے۔

خیال رہے کہ انا ہزار نے 2011میں بھی رام لیلا میدان میں لوک پال کی تقرری اور دیگر مطالبات پر تحریک چلائی تھی۔