کھیل

title_image


Share on Facebook

ماسکو:فیفاورلڈ کپ2018 میں پری کوارٹرفائنلز کی لائن اپ مکمل ہوگئی جب کہ 8 ٹیموں نے گھمسان کی لڑائی کیلئے کمرکس لی۔تمام ٹیمیں میچ جیتنے کیلئے حکمت عملی بنانے میں مصروف ہے۔ کوارٹر فائنل میں جمعہ کو پہلا جوڑ یوروگوئے اور فرانس کے درمیان کھیلا جائے گا، یوروگوئے ان تین ٹیموں میں سے ایک ہے جس نے اپنے تینوں گروپ میچز میں کامیابی حاصل کی۔ اس کا اب تک دفاع کافی بہتر رہا ہے، کپتان ڈیگو گوڈن اس میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں جبکہ اسٹرائیک فورس ایڈنسن کیوانی اور لوئس سواریز پر مشتمل ہے،کیوانی کی فٹنس ٹیم کیلئے تشویش کا باعث ہے، آخری 16 میں پرتگال کو روندنے کے بعد وہ خود بھی لنگڑاتے ہوئے میدان سے باہر آئے تھے جس کا سبب پنڈلی کی تکلیف تھی۔

گروپ اسٹیج میں فرانس کی کارکردگی بھی کافی بہتر رہی،اسے کیلیان ایمباپے کی خدمات حاصل ہیں جنھوں نے پری کوارٹر فائنل میں ارجنٹائنا کے خلاف شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 2گولز سے ٹیم کی 4-3 سے فتح میں اپنا تعاون کیاتھا۔ اب اس فرنچ سائیڈ کو جمعہ کے روز مضبوط یوروگوئین دفاع میں دراڑ ڈالنے کا چیلنج درپیش ہوگا جو ایمباپے کو خاص طور پر کھل کر کھیلنے کا موقع نہیں دیگا، فرانس کے اسٹرائیک میں موجود گہرائی اسے فائدہ پہنچا سکتی ہے۔

یوروگوئے کی طرح برازیل کا ڈیفنس ریکارڈ بھی کافی بہتر رہا، اب تک چار میچز میں صرف ایک بار ہی اس نے گول کھائے ہیں، آہستہ آہستہ ٹیم نے اپنی پوزیشن کو کافی بہتر بنانے کیساتھ اعتماد بھی بحال کرلیا،اسٹار پلیئر نیمار نے لاسٹ 16 میں ٹورنامنٹ کا اپنا دوسرا گول کیا، سوئٹزرلینڈ کیخلاف1-1 سے برابر میچ کے بعد برازیل نے کوسٹاریکا، سربیا اور میکسیکو سے میچز2-0 کے مارجن سے جیتے، جس کی بدولت ٹیم مسلسل ساتویں مرتبہ کوارٹر فائنل میں جگہ بنانے میں کامیاب ہوئی جہاں جمعہ کو ہی اس کا مقابلہ بیلجیئم سے ہونا ہے، یہ برازیل کیلئے ایک سخت آزمائش ہوگی، پری کوارٹر فائنل میں جاپان کے خلاف 0-2 کے خسارے سے دوچار ہوکر بیلجیئم نے مضبوط کم بیک کرتے ہوئے 3-2 سے کامیابی حاصل کی تھی۔

کوچ روبرٹو مارٹینز کو اب اہم ترین مقابلے کیلئے میدان میں اترنے سے قبل ٹیم فارمیشن کے بارے میں کچھ فیصلے بھی کرنا ہونگے۔ سوئیڈش سائیڈ ابھی تک تو ’انڈرڈاگ‘ کے اسٹیٹس سے لطف اندوز ہورہی ہے، توقعات کا کم بوجھ اپنے کندھوں پر اٹھانے والی یہ ٹیم کوالیفائنگ راؤنڈ میں نیدرلینڈز اور اٹلی کی حسرتیں خاک میں ملا چکی ہے،گروپ اسٹیج میں اس کی وجہ سے دفاعی چیمپئن جرمنی کو آگے بڑھنے کا موقع میسر نہیں آیا۔ 1994 کے بعد سوئیڈن نے پہلی بارکوارٹر فائنل میں جگہ بنائی اور ایک قدم مزید آگے بڑھنے کیلیے پراعتماد ہے،اس کا مقابلہ ہفتے کو انگلینڈ سے ہوگا جس نے کولمبیا کو پنالٹی شوٹ آؤٹس پر زیر کیا، ٹیم1990 کے بعد پہلا سیمی فائنل کھیلنے کیلئے بھی فیورٹ کا درجہ رکھتی ہے۔

کوچ گاریتھ ساؤتھ گیٹ اور ان کی نوجوان ٹیم کے حوصلے کافی بلند دکھائی دیتے ہیں۔ ہفتے کے روز ہی آخری کوارٹر فائنل میں میزبان روس کا مقابلہ گروپ اسٹیج میں تمام میچز جیتنے والی ٹیم کروشیا سے ہوگا، روسی ٹیم لاسٹ 16 میں اسپین کو پنالٹی شوٹ آؤٹس پر حیران کرنے کے بعد لاسٹ 8 مرحلے میں پہنچی ہے، اس کے حوصلے بھی کافی بلند اور وہ اب کروشیا کو بھی آؤٹ کلاس کرنے کے خواب دیکھ رہی ہے۔ یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ ناک آؤٹ مقابلے میں اکثر قسمت کروشین ٹیم سے دغا کرجاتی ہے، لاسٹ 16 میں تو وہ بچ گئی مگر اب کوارٹر فائنل میں دباؤ موجود ہوگا۔